تعلیم کے کنوئیں میں نااہلی کا کتا

Wusat Ullah Khan

مسائل اور وجوہات کی نشاندہی تو سینکڑوں بار ہو چکی مگر پاکستان کی موجودہ سیاسی ، اقتصادی و سماجی انتشاری فضا میں چند دردمند افراد اور این جی اوز یا فلاحی اداروں کو چھوڑ  کے کیا کوئی اہم سیاسی گروہ یا طبقہ ایسے بنیادی اقدامات کی شدید خواہش رکھتا ہے  کہ جن کے ذریعے پہلی جماعت سے اعلی  سطح تک تعلیمی معیار بتدریج بہتر ہوتا چلا جائے اور ہم اپنے تعلیمی اداروں سے خواندگی کے نام پر ہر سال ایک بے مصرف تازہ ہجوم سماجی کڑھاؤ میں انڈیلنے  کے بجائے ایک تربیت یافتہ علم دوست و جدت پسند نسل پروان چڑھا سکیں۔

سب سے پہلے تو یہ دیکھنا ہوگا کہ جو لوگ قوم کی مستقبل سازی کے حساس کام پر مامور ہیں وہ خود کس قدر اہل ہیں ؟ گمان ہے کہ سرکاری سیکٹرز میں محکمہ تعلیم روزگار فراہم کرنے والا سب سے بڑا شعبہ ہے۔مگر اہلیت ، انتخاب اور جوابدہی کے تناظر میں سب سے کمزور شعبہ بھی یہی ہے۔میرا مشاہدہ ہے کہ پولیس کے بعد جس محکمے میں سب سے زیادہ سیاسی مداخلت  ہے وہ تعلیم ہے۔اگر آج آغاخان ٹیسٹنگ سروس جیسے کسی جانچ ادارے کے زریعے اسکول سے لے کر سرکاری یونرسٹیوں تک اساتذہ اور منتظمین کی قابلیت پرکھی جائے تو مجھے یقین ہے کہ کم ازکم نصف تعداد اپنے مضمون پر مناسب عبور اور پڑھانے کی اہلیت کی بابت نااہل ثابت ہوگی۔اس بوجھ کے ہوتے اگر فرشتے بھی بہترین نصاب مرتب کر دیں اور تنخواہوں و مراعات میں بھی سو فیصد اضافہ کر دیا جائے تب بھی زرہ برابر فرق نہیں پڑے گا۔

جب  اساتذہ کی اکثریت کا یہ حال ہو تو وہ اپنے شاگرد کو کیسے متاثر کریں گے۔سفارش پر بھرتی ہونے والا ٹیچر شاگرد کو کس منہ سے میرٹ کی اہمیت  کا درس دے گا۔رشتے داری و رشوت کے بل پر مقرر ہونے والا کیسے یہ حدیث اپنے شاگردوں کو سنا پائے گا کہ رشوت لینے اور دینے والا دونوں جہنمی ہیں۔اس کے الفاظ تھوتھے چنے کی طرح بجنے کے علاوہ کیا تاثیر پیدا کریں گے ؟

ظلم یہ ہے کہ ہزاروں ایسے نوجوان لڑکے لڑکیاں جن کے پاس مطلوبہ قابلیت و صلاحیت ہے جوتیاں چٹخاتے گھوم رہے ہیں۔اگر انہیں ٹیچنگ کی جدید بیشہ ورانہ تربیت دے کر ملازمت دی جائے تو یقیناً  تدریسی معیار میں فرق پڑنا شروع ہو جائے گا مگر سیاسی مصلحت محکمہ تعلیم میں بھرے نااہلوں سے جوہرِ قابل لانے کے لئے جگہ کیسے خالی کروائے گی ؟

دوسرا اہم مسئلہ نصاب کی تشکیل کا ہے۔نصاب ایک نسل کو خونخوار بھی بنا سکتا ہے اور نصاب ہی ایک نسل میں انسانی ہمدردی اور بھائی چارے کے جذبے کو بھی کوٹ کوٹ کر بھر سکتا ہے۔نصاب ہر سال تیزی سے بدلتی دنیا سے ہم آہنگ ہونے کے لئے مسلسل نظرِثانی اور اساتذہ کو جدت کاری کا عادی بنانے کے لئے ریفریشر کورسز و تربیت کا متقاضی ہے۔

Alif Ailaan Report
کوہستان کی تعلیم سیاسی اُمیدواروں کی اولین ترجیح
شرکاء نے سیاسی نمائندوں کے سامنے تعلیمی مسائل کے انبار لگادیئے

پاکستان کے سرکاری تعلیمی ادارں میں جو نصاب پڑھایا جا رہا ہے وہ اتفاق سے زیادہ نفاق کی تعلیم دیتا ہے۔وہ عشروں پرانے حقائق اور فارمولوں پر استوار بے رنگ و بے بو و بے زائقہ پلندہ ہے۔جن کے اپنے ہجے درست نہیں وہ اردو اور انگریزی پڑھا رہے ہیں ، جو بنا کیلکولیٹر سادہ جمع تفریق نہیں کرپاتے انہیں بچوں کے پڑھانے کو الجبرا  تھما دیا جاتا ہے۔اس کا ثبوت آپ کسی بھی قصبے کی بک شاپ میں جا کے ملاحظہ کر سکتے ہیں۔

سب سے زیادہ فروخت گذشتہ برسوں کے حل شدہ امتحانی پرچوں اور انگریزی ، اردو ، میھتس کی گائیڈ بکس کی ہے۔یعنی استاد سے تو کچھ ملنا نہیں اس لئے رٹا لگاؤ اور تینتیس نمبر حاصل کر کے کامیاب ہو جاؤ۔یہی نظام ہے جو حاضری لگا کے گھر بھاگنے یا متبادل نوکری  یا ٹیوشن کا کاروبار کرنے والی مافیا کو بھاتا ہے۔

کسی بھی بچے کو پہلی بار اسکول اور تعلیم کی جانب راغب کرنے کے لئے چمکیلے رنگ ، نرم چہرے والے مسکراتے ہمدرد و مددگار ، دلچسپ کہانیوں کی مدد سے باتوں باتوں میں گنتی یاد کروانے والے اور طفلانہ نفسیات سمجھنے والے اساتذہ چاہئیں۔یعنی کنڈرگارٹن اور پرائمری لیول کے استاد و استانی کا جس قدر باصلاحیت اور جازب ہونا ضروری ہے اتنا کسی اور درجے کے استاد کے لئے ضروری نہیں۔کیونکہ اسی استاد  کے کندھوں پر ایک اور تازہ نئی نسل کی تعلیمی بنیاد رکھنے کی سب سے نازک زمہ داری ہوتی ہے۔اگر اس بنیادی مرحلے پر خالص میرٹ پر اچھی تنخواہ والے اساتذہ کو رکھا جائے تو ان کے ہاتھوں رکھی جانے والی  بنیاد پر بچہ خود بخود اپنے مشفقوں کی نگرانی میں اپنے مستقبل کی عمارت تعمیر کرتا چلا جائے گا۔

مگر ہمارے تعلیمی نظام میں سب سے زیادہ نظرانذاز اور بے وقعت طبقہ پرائمری اساتذہ کا ہے۔ان اساتذہ سے توقع کی جاتی ہے کہ وہ قدرتی آفات کے موقع پر رضاکاری بھی نبھائیں ، ووٹرز لسٹ اور مردم شماری کی مہم سے لے کر ویکیسینشن تک کی مہم میں اپنا اصل کام چھوڑ کر ہاتھ بٹائیں اور پھر یہ توقع بھی رکھی جاتی ہے کہ وہ بہتر تعلیمی نتائج بھی پیدا کر کے دیں۔سوچئے جب معمار ایسا تھکن سے چور اور اکتاہٹ کا مارا ہوگا تو بنیاد کیسی رکھے گا  اور اس بنیاد پر اعلی تعلیم کی عمارت کتنا وزن سہار پائے گی۔

باقی دنیا میں بنیاد اچھی ہونی چاہئیے کے اصول پر سب سے زیادہ تعلیمی بجٹ پرائمری تعلیم کی مد میں رکھا جاتا ہے۔مگر ہمارے ہاں سب سے زیادہ بجٹ اعلی تعلیم کی مد میں مختص کیا جاتا ہے۔یعنی کرتا شاندار لیکن پاجامہ غائب ۔

میری بیٹی لندن میں پیدا ہوئی ۔جب میں اسے شمالی لندن کے ایک سرکاری اسکول میں داخل کرانے لے گیا تو اساتذہ نے اتنی محبت سے اس کا استقبال کیا کہ اس نے گھر واپس جانے سے انکار کردیا۔اسکول کی ہیڈ ٹیچر نے مجھ سے پوچھا کہ بچی کی مادری زْبان کیا ہے ؟ میں نے کہا اردو۔ہیڈ ٹیچر نے کہا اپنے بچوں سے ہمیشہ مادری زبان میں بات کیجئے گا تاکہ ان کا لسانی ڈھانچہ مضبوط ہو جائے۔اگر مادری زبان انہوں نے روانی سے بول لی تو پھر وہ دنیا کی ہر زبان آسانی سے سیکھ لیں گے۔براہِ کرم اپنے بچوں سے انگریزی یا منگلش میں بات مت کیجئے گا ورنہ وہ کنفیوز ہو جائیں گے۔انگریزی تو یہ بچی اسکول میں بول ہی لے گی مگر مادری زبان پر اس کی گرفت ہونا زیادہ اہم ہے۔

مگر ہمارے ہاں مادری زبان کی جس طرح حوصلہ شکنی کی جاتی ہے وہ ایک سانحے سے کم نہیں۔پاکستانی بچے پر دوہرا تہرا عذاب ہے ۔گھر میں وہ پنجابی ، سندھی ، سرائیکی ، بشتو ، بلوچی بولتا ہے مگر پورا نصاب اردو یا انگریزی میں ہے۔یعنی بچپن سے ہی اس پر تین زبانیں لاد دی جاتی ہیں۔اور گھر والے بھی چونکہ احساسِ کمتری کے مارے ہوتے ہیں اس لیے وہ بھی اسے مادری زبان سے زیادہ اردو اور غلط سلط انگریزی میں الجھا  کر رہا سہا حوصلہ بھی پست کر دیتے ہیں۔

ہمارے اسکولوں میں ڈراپ آؤٹ ہونے کی سب سے بڑی وجہ غربت نہیں بلکہ لسانی اعتبار سے اول جلول تعلیی نظام ہے۔اگر پرائمری لیول تک تمام بچوں کو ان کی مادری زبان میں تعلیم ملے اور پرائمری کے بعد انہیں اردو اور انگریزی ” کام چلانے کی زبان ” کے طور پر سکھائی جائے تو ڈراپ آؤٹ بچوں کا تناسب حیرت انگیز طور پر کم ہو سکتا ہے ۔کون جانے کہ کتنے ہی آئن سٹائن اس لئے کسی مستری کی دوکان پر چھوٹے بن جاتے ہیں کہ ان سے بچپن میں ہی تعلیم کے نام پر ان کی مادری زبان چھین لی جاتی ہے ۔

مگر یہاں قابل اور بااعمتاد نئی نسل کسے چاہئیے ؟ سیاستدان کو ؟ نہیں ۔کیونکہ یہ بچے کہیں اس سے کوئی مشکل سوال نہ کر دیں ؟ حکمران اشرافیہ کو ؟ ہرگز نہیں ؟ پھر اشرافیہ کے اپنے بچوں کے محفوظ و ریزرو مستقبل کا کیا ہوگا ؟ اسٹیبشلمنٹ کو ؟ نہیں ؟ کیونکہ اسی نسل نے کل کلاں ہوش سنبھال کر یہ پوچھ لیا کہ ہمارا حصہ کہاں ہے تو کیا ہوگا ؟

لہذا تعلیم کی زبوں حالی کا رونا روتے رہو اور صوبائی و قومی حقوق کی آڑ میں نصاب اور اندازِ تعلیم کی بندر بانٹ کرتے رہو ، اپنے کمداروں اور منشیوں کے بچوں کو سرکاری ٹیچری تھماتے رہو اور پھر سارا الزام یہود و  ہنود و نصاری پر رکھ دو جو پاکستان کو ہرگز ہرگز ترقی کرتے نہیں دیکھنا چاہتے۔

پاکستان خیرات و چندہ دینے والے دریا دل ممالک میں چوتھے یا پانچویں نمبر پر ہے۔مگر یہ چندہ فقیر کو جاتا ہے ، دائمی زیرِ تعمیر مسجد و مدرسے و روحانی درباروں کو جاتا ہے یا پھر بریانی کی دیگیں بانٹنے پر صرف ہو جاتا ہے۔اگر یہی چندہ اور زکوات و خیرات کسی ڈسپلن کے تحت خوف ِ خدا  اور خوفِ مستقبل رکھنے والوں کی نگرانی میں جمع  اور خرچ کیا جائے تو تین برس بعد کوئی بچہ اسپتال کی سیڑھیوں پر پیدا نہیں ہوگا ، کوئی بچہ ڈراپ آؤٹ نہیں ہوگا۔بلکہ اتنے بچے چلے آئیں گے کہ ہر اسکول میں صبح شام کی دو دو شفٹیں کرنا پڑیں گی۔یوں اہل مگر بے روزگار نوجوانوں کو بھی کوئی تعمیری روزگاری مصروفیت ہاتھ آ جائے گی۔مگر وہ  سرمایہ کاری اور سخاوت کس کام کی جو میڈیا پر نظر نہ آئے ۔معیاری تعلیم تو ویسے بھی ایک خاموش ، صبر آزما اور دیر سے پھل دینے والی انویسٹمنٹ ہے۔

بنیادی بیماریوں کا علاج کرنے کے بجائے باتوں کی مرہم پٹی سے دل اور وقت تو بہل جائے گا لیکن جب تک منصوبہ بند نا اہلی کا کتا تعلیم کے کنوئیں میں موجود ہے اصلاحات کے نام پر چالیس ڈول نکال لیں یا ڈال لیں کچھ نہ ہونے کا۔

وسعت اللہ خان ملک کے مایہ ناز کالم نگار اور تجزیئہ کار ہیں

Rana Awais (PP-193) commits to Focus on Missing Facilities

Mian Irfan (PP-231) Commits to Provide Missing Facilities

Elsewhere on Taleem Do

Alif Ailaan Report

Kohistan event draws out support for education

Candidates say they are committed to improvement if elected

Shabana Mahfooz

Learning at crossroads!

The teachers need to be trained adequately and skilled properly

Samar Quddus

The voter should strike while the iron is hot

Conversation with contestants should focus on education reform

Sana Samad

Lack of libraries impeding students

Balochistan needs to urgently address this basic need

آج ہی تعلیم دو ایپ ڈاؤن لوڈ کریں اور پاکستان میں تعلیمی اصلاحات کے لیے اپنی آواز بلند کریں