جتنا پیسہ اتنی تعلیم

Salman Buzdar

پنجاب ایجوکیشن فاونڈیشن(پیف) کے سکولوں کے بارے میں بہت کچھ لکھا جا چکا ہے اور کئی لوگ ایسے ہیں جو ان سکولوں کی تعریفوں کے پُل باندھتے نظر آتے ہیں ۔ لیکن مکمل حقیقت وہ نہیں ہے جو بتائی جاتی ہے ، بہت سے پیف سکول ایسے بھی ہیں جو کہ فروغِ تعلیم اور معیارِتعلیم میں اضافے کی بجائے قوم کے بچوں کے مستقبل سے کھیل رہے ہیں۔صوبہ پنجاب کے پسماندہ ترین اضلاع میں شامل ضلع راجن پور کے نواحی علاقے شکار پور میں موجود پیف سے الحاق شدہ سکول صرف تعداد دکھا کر پیسے بنا رہے ہیں۔ اس کے علاوہ ان سکولوں کے منتظمین صرف  اپنے خاندان اوربرادری کے بچوں پر محنت کرتے ہیں جبکہ باقی بچوں پر توجہ نہیں دی جاتی۔  رزلٹ دکھانے کے لیے صرف چند بچوں کی کارکردگی پیش کردی جاتی ہے جبکہ غریب بچے ان سکولوں سے تعلیم کے نام پر  کچھ بھی نہیں سیکھ رہے۔

Zafar Sultan
مدارس کے طلباء سے ریاست کا امتیازی سلوک
ریاست کا مدارس کے طلباء کے ساتھ سوتیلی ماں جیسا سلوک کیوں؟

 اس حوالے سے جب پیف سکولوں کے  ضلعی کوآرڈینیٹر سے بات کی گئی تو انہوں نے جواب دیا کہ جتنا  پیسہ ہمیں پنجاب حکومت کی جانب  سے ملتا ہم اتنا ہی پڑھاتے ہیں۔ جہاں پنجاب کے دیگر اضلاع میں پیف سکولوں کی کارکردگی کی تعریفیں سننے کو ملتی ہیں وہیں  پورے ضلع راجن پور میں پیف سکولوں کی کارکردگی نہ ہونے کے برابر ہے، صرف دکھاوے کی تعداد اور دکھاوے کا رزلٹ۔ دیگر شعبوں کے طرح تعلیم کے شعبے میں بھی حکومتِ پنجاب کی توجہ صرف بالائی اور وسطی پنجاب تک محدود ہے اور جنوبی پنجاب کو ہمیشہ کی طرح نظرانداز کیا جارہا ہے  جس کی واضح مثال ضلع میں قائم پیف سکولوں کی کارکردگی ہے۔

Elsewhere on Taleem Do

Alif Ailaan Report

Public fury in Thatta at failing system

Candidates pledge to send own children to govt schools

Muhammad Abbas Khaskheli

Elections should be about ‘Taleem Do!’

Sindh province suffered a lot in the field of education

Amjad Chauhdry

Teach children to think critically, not to rote learn

Education system is focused on making children rote learning

Syed Ali Shah

If it weren’t for education …

Our school comprised a mud-plastered room donated by a villager

آج ہی تعلیم دو ایپ ڈاؤن لوڈ کریں اور پاکستان میں تعلیمی اصلاحات کے لیے اپنی آواز بلند کریں